ہیں دل میں درد مگر کیوں بیاں نہیں ہوتا

جتیندر شرما

ہیں دل میں درد مگر کیوں بیاں نہیں ہوتا

جتیندر شرما

MORE BYجتیندر شرما

    ہیں دل میں درد مگر کیوں بیاں نہیں ہوتا

    کہ کوئی اتنا بھی تو بے زباں نہیں ہوتا

    حساب کیسے کرے کوئی عشق و الفت میں

    دلوں کے سودے میں سود و زیاں نہیں ہوتا

    کبھی تلاش ہی لیتا میں منزلیں اپنی

    جو راستوں پہ غموں کا دھواں نہیں ہوتا

    یہ برگ زرد درختوں سے جھڑ گئے کیسے

    خدایا کاش یہ دور خزاں نہیں ہوتا

    جدھر بھی دیکھو سمندر یہاں غموں کا ہے

    اگر یہی ہے جہاں تو جہاں نہیں ہوتا

    مأخذ :
    • کتاب : Word File Mail By Salim Saleem

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے