ہیں ایک صف میں قلندر بھی میں بھی دنیا بھی

منصور عثمانی

ہیں ایک صف میں قلندر بھی میں بھی دنیا بھی

منصور عثمانی

MORE BYمنصور عثمانی

    ہیں ایک صف میں قلندر بھی میں بھی دنیا بھی

    ستم زدہ بھی ستم گر بھی میں بھی دنیا بھی

    خدا کے نام پہ کیا کیا فریب دیتے ہیں

    زمانہ ساز یہ رہبر بھی میں بھی دنیا بھی

    وہ ایک لمحہ کہ ہم سب لپٹ کے روئے تھے

    اداس رات کا منظر بھی میں بھی دنیا بھی

    دعائیں مانگتے رہتے ہیں تجھ سے ملنے کی

    اداس اداس مرا گھر بھی میں بھی دنیا بھی

    سفر پہ نکلے تو اکثر بھٹک گئے جاناں

    تمہاری یاد کے لشکر بھی میں بھی دنیا بھی

    غزل کے سانچے میں ڈھلتے ہیں ٹوٹ جاتے ہیں

    وفا کی راہ کے پتھر بھی میں بھی دنیا بھی

    جدا جدا ہیں مگر پھر بھی ساتھ ہیں منصورؔ

    محبتوں کے سمندر بھی میں بھی دنیا بھی

    مأخذ :
    • کتاب : Kashmakash (Pg. 109)
    • Author : Mansoor Usmani
    • مطبع : Najma House, Baradari, Moradabad (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY