ہلاک تیغ جفا یا شہید ناز کرے

بیدم شاہ وارثی

ہلاک تیغ جفا یا شہید ناز کرے

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    ہلاک تیغ جفا یا شہید ناز کرے

    ترا کرم ہے جسے جیسے سرفراز کرے

    ہر ایک ذرہ ہے عالم کا گوش بر آواز

    تو پھر کہاں پہ کوئی گفتگوئے راز کرے

    تجلیاں جسے گھیرے ہوں تیرے جلوہ کی

    وہ دیر و کعبہ میں کیا خاک امتیاز کرے

    محال ترک خیال نجات ہے لیکن

    وہ بے نیاز جسے چاہے بے نیاز کرے

    مرے کریم جو بے مانگے تجھ سے پاتا ہو

    وہ جا کے کیوں کہیں دست طلب دراز کرے

    یہ حسن و عشق کا ہے اتحاد یک رنگی

    وہی ہے مرضئ محمود جو ایاز کرے

    بنائے زندۂ جاوید یا رکھے بیدمؔ

    مرے سر آنکھوں پہ جو کچھ نگاہ ناز کرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے