ہم اہل جبر کے نام و نسب سے واقف ہیں

افتخار عارف

ہم اہل جبر کے نام و نسب سے واقف ہیں

افتخار عارف

MORE BY افتخار عارف

    ہم اہل جبر کے نام و نسب سے واقف ہیں

    سروں کی فصل جب اتری تھی تب سے واقف ہیں

    کبھی چھپے ہوئے خنجر کبھی کھنچی ہوئی تیغ

    سپاہ ظلم کے ایک ایک ڈھب سے واقف ہیں

    وہ جن کی دستخطیں محضر ستم پہ ہیں ثبت

    ہر اس ادیب ہر اس بے ادب سے واقف ہیں

    یہ رات یوں ہی تو دشمن نہیں ہماری کہ ہم

    درازئ شب غم کے سبب سے واقف ہیں

    نظر میں رکھتے ہیں عصر بلند بامیٔ مہر

    فرات جبر کے ہر تشنہ لب سے واقف ہیں

    کوئی نئی تو نہیں حرف حق کی تنہائی

    جو جانتے ہیں وہ اس امر رب سے واقف ہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Mahr-e-Do neem (Pg. 100)
    • Author : iftikhaar aarif

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY