ہم ہتھیلی پہ جان رکھتے ہیں

بشیر مہتاب

ہم ہتھیلی پہ جان رکھتے ہیں

بشیر مہتاب

MORE BYبشیر مہتاب

    ہم ہتھیلی پہ جان رکھتے ہیں

    اور تیری امان رکھتے ہیں

    چند اشکوں کے واسطے صاحب

    تیری باتوں کا مان رکھتے ہیں

    تم گزرتے ہو اجنبی بن کر

    ہم تو دل پر چٹان رکھتے ہیں

    جو بھی ہیں ہم بس اک ہمیں ہیں ہم

    دوست کیا کیا گمان رکھتے ہیں

    میٹھی باتوں سے کیا انہیں مطلب

    ہر گھڑی سینا تان رکھتے ہیں

    کتنے شاطر ہیں وہ مرے ہم دم

    دل میں تیر و کمان رکھتے ہیں

    خامشی مصلحت رہی مہتابؔ

    ورنہ ہم بھی زبان رکھتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY