aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ہم جو اس شہر میں انجان ہوئے جاتے ہیں

آصف بلال

ہم جو اس شہر میں انجان ہوئے جاتے ہیں

آصف بلال

MORE BYآصف بلال

    ہم جو اس شہر میں انجان ہوئے جاتے ہیں

    سارے رشتے بھی تو بے جان ہوئے جاتے ہیں

    اب ہمیں چاہئے کہ ترک تعلق کر لیں

    ایک دوجے سے پریشان ہوئے جاتے ہیں

    وہ سر بزم ہمیں آپ سے کرتا ہے خطاب

    اور ہم اس پہ پشیمان ہوئے جاتے ہیں

    پیچ در پیچ ہوئی جاتی ہے دنیا ہم پر

    جانے کیوں اس پہ ہم آسان ہوئے جاتے ہیں

    کون گزرا ہے ابھی دہر سے جس کے غم میں

    سارے منظر ہی بیابان ہوئے جاتے ہیں

    رنگ لائی ہے کچھ اس طرح سے یہ تشنہ لبی

    ہم اب اک دشت کا عنوان ہوئے جاتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے