ہم جو پہلے کہیں ملے ہوتے

سلمان اختر

ہم جو پہلے کہیں ملے ہوتے

سلمان اختر

MORE BYسلمان اختر

    ہم جو پہلے کہیں ملے ہوتے

    اور ہی اپنے سلسلے ہوتے

    پھر ہر اک بات ٹھیک سے ہوتی

    پھر نہ الجھن نہ فاصلے ہوتے

    پھر نہ تنہائی رات کو ڈستی

    پھر نہ قسمت سے یہ گلے ہوتے

    پھر نہ لگتا یہ شہر اک صحرا

    پھر نہ گم دل کے قافلے ہوتے

    پھر غزل ہوتی سب زبانوں پر

    پھر کسی کے نہ لب سلے ہوتے

    پھر ہر اک لمحہ گنگنا اٹھتا

    پھر ہر اک سمت گل کھلے ہوتے

    مآخذ :
    • کتاب : Soch Samajh (Pg. 34)
    • Author : Salman Akhtar
    • مطبع : Star Publishers Pvt.Ltd, N. Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY