ہم کیوں یہ کہیں کوئی ہمارا نہیں ہوتا

مظفر وارثی

ہم کیوں یہ کہیں کوئی ہمارا نہیں ہوتا

مظفر وارثی

MORE BYمظفر وارثی

    ہم کیوں یہ کہیں کوئی ہمارا نہیں ہوتا

    موجوں کے لئے کوئی کنارا نہیں ہوتا

    دل ٹوٹ بھی جائے تو محبت نہیں مٹتی

    اس راہ میں لٹ کر بھی خسارا نہیں ہوتا

    سرمایۂ شب ہوتے ہیں یوں تو سبھی تارے

    ہر تارہ مگر صبح کا تارا نہیں ہوتا

    اشکوں سے کہیں مٹتا ہے احساس تلون

    پانی میں جو گھل جائے وہ پارا نہیں ہوتا

    سونے کی ترازو میں مرا درد نہ تولو

    امداد سے غیرت کا گزارا نہیں ہوتا

    تم بھی تو مظفرؔ کی کسی بات پہ بولو

    شاعر کا ہی لفظوں پہ اجارا نہیں ہوتا

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 217)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY