ہم نے آداب غم کا پاس کیا

سحر انصاری

ہم نے آداب غم کا پاس کیا

سحر انصاری

MORE BY سحر انصاری

    ہم نے آداب غم کا پاس کیا

    نقد جاں کو زیاں قیاس کیا

    زیست کے تجربات کا ہم نے

    مثل آئینہ انعکاس کیا

    خبر آگہی کے پردے میں

    عمر بھر ماتم حواس کیا

    تہمت شعلۂ زباں لے کر

    صورت زخم التماس کیا

    کیسے اک لفظ میں بیاں کر دوں

    دل کو کس بات نے اداس کیا

    آ گیا جب سلیقۂ تعمیر

    قصر ہستی کو بے اساس کیا

    کیوں سحرؔ تم نے اپنے صحرا کو

    موج دریا سے روشناس کیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY