ہم نیں سجن سنا ہے اس شوخ کے دہاں ہے

آبرو شاہ مبارک

ہم نیں سجن سنا ہے اس شوخ کے دہاں ہے

آبرو شاہ مبارک

MORE BYآبرو شاہ مبارک

    ہم نیں سجن سنا ہے اس شوخ کے دہاں ہے

    لیکن کبھو نہ دیکھا کیتا ہے اور کہاں ہے

    ڈھونڈا ہزار تو بھی تیرا نشاں نہ پایا

    لشکر میں گل رخاں کے تیری مثل کہاں ہے

    اب تشنگی کا روزہ شاید کھلے ہمارا

    شام و شفق سجن کا مسی و رنگ پاں ہے

    دل میں کیا ہے دعوا انکھیاں ہوئی ہیں منکر

    تیری کمر کا جھگڑا ان دو کے درمیاں ہے

    رہتا ہوں اے پیارے قدموں تلے تمہارے

    جس راہ آوتے ہو عاجز کا وہیں مکاں ہے

    تجھ خط پشت لب میں تس کا سخن ہوا سبز

    اس کی زباں دہن میں مانند برگ پاں ہے

    پیری سیں قد کماں ہے ہر چند آبروؔ کا

    اس نوجواں کی خاطر دل اب تلک کشاں ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Aabro (Pg. 255)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے