ہم قلندر ہیں ہمیں آتا ہے فاقہ کرنا

محمد علی ساحل

ہم قلندر ہیں ہمیں آتا ہے فاقہ کرنا

محمد علی ساحل

MORE BYمحمد علی ساحل

    ہم قلندر ہیں ہمیں آتا ہے فاقہ کرنا

    ہم نے سیکھا ہی نہیں کوئی تماشہ کرنا

    رازداں بن کے رہو کچھ تو سلیقے سیکھو

    راز پر اتنا بھی مشکل نہیں پردہ کرنا

    یوں ہی دیکھا ہے کئی بار تری محفل میں

    کتنا آساں ہے کسی شخص کو رسوا کرنا

    یاد ہے خوب مجھے میرے لیے رب کے حضور

    ماں کا رو رو کے دعا کرنا وہ سجدہ کرنا

    آنسوؤں کو کبھی گرنے نہ دیا پلکوں سے

    مجھ کو آیا ہی نہیں پیار کو رسوا کرنا

    عشق یہ کون سی منزل پہ مجھے لے آیا

    آئنہ سامنے رکھنا تجھے سوچا کرنا

    اپنے اجداد سے ساحل یہ ہنر آیا ہے

    راہ حق میں نہ کبھی جان کی پروا کرنا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    محمد علی ساحل

    محمد علی ساحل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY