ہم سفر تھم تو سہی دل کو سنبھالوں تو چلوں

واصف دہلوی

ہم سفر تھم تو سہی دل کو سنبھالوں تو چلوں

واصف دہلوی

MORE BYواصف دہلوی

    ہم سفر تھم تو سہی دل کو سنبھالوں تو چلوں

    منزل دوست پہ دو اشک بہا لوں تو چلوں

    ہر قدم پر ہیں مرے دل کو ہزاروں الجھاؤ

    دامن صبر کو کانٹوں سے چھڑا لوں تو چلوں

    مجھ سا کون آئے گا تجدید مکارم کے لیے

    دشت امکاں کی ذرا خاک اڑا لوں تو چلوں

    بس غنیمت ہے یہ شیرازۂ لمحات بہار

    دھوم سے جشن خرابات منا لوں تو چلوں

    پاؤں زخمی ہوئے اور دور ہے منزل واصفؔ

    خون اسلاف کی عظمت کو جگا لوں تو چلوں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ہم سفر تھم تو سہی دل کو سنبھالوں تو چلوں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY