ہم سنائیں گے تجھے اپنا فسانہ ایک دن

کلدیپ سلل

ہم سنائیں گے تجھے اپنا فسانہ ایک دن

کلدیپ سلل

MORE BYکلدیپ سلل

    ہم سنائیں گے تجھے اپنا فسانہ ایک دن

    یوں نہیں اے زندگی فرصت میں آنا ایک دن

    بات لمبی وقت تھوڑا آنکھ نم ہے آپ کی

    اس طرح بھی کیا خبر تھی ہوگا جانا ایک دن

    بات آئی ہے زباں پہ عرض کر دوں جو کہو

    ہم نے چاہا تھا تمہیں اپنا بنانا ایک دن

    رہ نہ جائے کوئی حسرت کر گزر جو تجھ سے ہو

    ورنہ اس اندھے کنویں میں سب کو جانا ایک دن

    ہو سکا نہ کچھ بھی ہم سے اے وطن کر دے معاف

    ہم نے چاہا تھا تجھے جنت بنانا ایک دن

    سو تہوں میں قید ہے اب ہر خوشی انسان کی

    سو تہوں کو چیر کر ہے پار جانا ایک دن

    بات اپنی غم پرانے اور تیری داستاں

    سن زمانے کچھ ہمیں بھی تھا سنانا ایک دن

    ان پھہاروں سے نہ ٹوٹیں گی یہ چٹانیں سلیلؔ

    لے کے تم کو بجلیاں اب ہوگا آنا ایک دن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY