ہمارے پاس نہ دل ہے نہ دل کی بات کوئی

خلیل مامون

ہمارے پاس نہ دل ہے نہ دل کی بات کوئی

خلیل مامون

MORE BYخلیل مامون

    ہمارے پاس نہ دل ہے نہ دل کی بات کوئی

    گزر رہی ہے ہمارے سروں سے رات کوئی

    اکیلے ملتے ہیں صحرا ہو یا کہ دریا ہو

    کسی کے ساتھ نہیں ہم نہ اپنے ساتھ کوئی

    ہمارے چہرے پہ سو رنگ کی بہاریں ہیں

    کہ جیسے قلب میں زندہ ہے کائنات کوئی

    اب اس کے بعد ہوائیں ہی اس کا مدت ہیں

    شجر سے ٹوٹ رہا ہے خزاں میں پات کوئی

    تمام فتنۂ دوراں مجھی سے ابھرے ہیں

    کہاں ہے زیست میں مجھ سے علیحدہ ذات کوئی

    ہزار بار گرائی ہیں اس کی دیواریں

    کہ جیسے دل بھی نہیں دل ہے سومنات کوئی

    عبث میں کاٹ رہا ہوں یہ زندگی مامونؔ

    نہیں ہے جیت کوئی اس میں اور نہ مات کوئی

    RECITATIONS

    خلیل مامون

    خلیل مامون

    خلیل مامون

    ہمارے پاس نہ دل ہے نہ دل کی بات کوئی خلیل مامون

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY