ہمارے ساتھ امید بہار تم بھی کرو

فراغ روہوی

ہمارے ساتھ امید بہار تم بھی کرو

فراغ روہوی

MORE BYفراغ روہوی

    ہمارے ساتھ امید بہار تم بھی کرو

    اس انتظار کے دریا کو پار تم بھی کرو

    ہوا کا رخ تو کسی پل بدل بھی سکتا ہے

    اس ایک پل کا ذرا انتظار تم بھی کرو

    میں ایک جگنو اندھیرا مٹانے نکلا ہوں

    ردائے تیرہ شبی تار تار تم بھی کرو

    تمہارا چہرہ تمہیں ہو بہ ہو دکھاؤں گا

    میں آئنہ ہوں، مرا اعتبار تم بھی کرو

    ذرا سی بات پہ کیا کیا نہ کھو دیا میں نے

    جو تم نے کھویا ہے اس کا شمار تم بھی کرو

    مری انا تو تکلف میں پاش پاش ہوئی

    دعائے خیر مرے حق میں یار' تم بھی کرو

    اگر میں ہاتھ ملاؤں تو یہ ضروری ہے

    کہ صاف سینے کا اپنے غبار تم بھی کرو

    کوئی ضروری نہیں ہے کہ سب کی طرح فراغؔ

    زمانے والی روش اختیار تم بھی کرو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے