ہمارے سر پہ کوئی ہاتھ تھا نہ سایہ تھا

محمد اظہار الحق

ہمارے سر پہ کوئی ہاتھ تھا نہ سایہ تھا

محمد اظہار الحق

MORE BYمحمد اظہار الحق

    ہمارے سر پہ کوئی ہاتھ تھا نہ سایہ تھا

    بس آسماں تھا جسے جانے کیوں بنایا تھا

    کسی سے شام ڈھلے چھن گیا تھا پایۂ تخت

    کسی نے صبح ہوئی اور تخت پایا تھا

    وہ ایک صبح بہت زر فشاں تھی قریے پر

    اور ایک کھیت بہت سبز لہلہایا تھا

    بس ایک باغ تھا پانی کے جس میں چشمے تھے

    اور ایک گھر تھا جسے خاک سے بنایا تھا

    پکار اٹھیں گے نابود بستیوں کے نشاں

    کہ اس نواح میں کوئی نذیر آیا تھا

    مآخذ:

    • کتاب : Quarterly TASTEER Lahore (Pg. 161)
    • Author : Naseer Ahmed Nasir
    • مطبع : Room No.-1,1st Floor, Awan Plaza, Shadman Market, Lahore (Issue No. 5,6 April To Sep. 1998)
    • اشاعت : Issue No. 5,6 April To Sep. 1998

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY