ہمارے شوق کی یہ انتہا تھی

جاوید اختر

ہمارے شوق کی یہ انتہا تھی

جاوید اختر

MORE BY جاوید اختر

    ہمارے شوق کی یہ انتہا تھی

    قدم رکھا کہ منزل راستا تھی

    بچھڑ کے ڈار سے بن بن پھرا وہ

    ہرن کو اپنی کستوری سزا تھی

    کبھی جو خواب تھا وہ پا لیا ہے

    مگر جو کھو گئی وہ چیز کیا تھی

    میں بچپن میں کھلونے توڑتا تھا

    مرے انجام کی وہ ابتدا تھی

    محبت مر گئی مجھ کو بھی غم ہے

    مرے اچھے دنوں کی آشنا تھی

    جسے چھو لوں میں وہ ہو جائے سونا

    تجھے دیکھا تو جانا بد دعا تھی

    مریض خواب کو تو اب شفا ہے

    مگر دنیا بڑی کڑوی دوا تھی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نازش

    نازش

    جاوید اختر

    جاوید اختر

    RECITATIONS

    جاوید اختر

    جاوید اختر

    جاوید اختر

    ہمارے شوق کی یہ انتہا تھی جاوید اختر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY