ہنگامہ ہے نہ فتنۂ دوراں ہے آج کل

شعری بھوپالی

ہنگامہ ہے نہ فتنۂ دوراں ہے آج کل

شعری بھوپالی

MORE BYشعری بھوپالی

    ہنگامہ ہے نہ فتنۂ دوراں ہے آج کل

    ہر سمت شمع امن فروزاں ہے آج کل

    سننے میں آ رہے ہیں مسرت کے واقعات

    جمہوریت کا حسن نمایاں ہے آج کل

    جو غنچہ ہے وہ اپنے تبسم میں مست ہے

    جو پھول ہے بہار بہ داماں ہے آج کل

    نظروں میں اضطراب نہ دل میں کوئی کھٹک

    کانٹوں سے پاک صحن گلستاں ہے آج کل

    مدت کے بعد آیا ہے آزادیوں کا لطف

    افسردہ ہے نہ کوئی پریشاں ہے آج کل

    اب اہل کارواں کا بھٹکنا بحال ہے

    خود میر کارواں ہی نگہباں ہے آج کل

    جس انجمن میں جاتے نہ تھے پہلے اہل دل

    شعریؔ اس انجمن میں غزل خواں ہے آج کل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY