aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ہنستی آنکھیں ہنستا چہرہ اک مجبور بہانہ ہے

عندلیب شادانی

ہنستی آنکھیں ہنستا چہرہ اک مجبور بہانہ ہے

عندلیب شادانی

MORE BYعندلیب شادانی

    ہنستی آنکھیں ہنستا چہرہ اک مجبور بہانہ ہے

    چاند میں سچ مچ نور کہاں ہے چاند تو اک ویرانہ ہے

    ناز پرستش بن جائے گا صبر ذرا اے شورش دل

    الفت کی دیوانہ گری سے حسن ابھی بیگانہ ہے

    مجھ کو تنہا چھوڑنے والے تو نہ کہیں تنہا رہ جائے

    جس پر تجھ کو ناز ہے اتنا اس کا نام زمانہ ہے

    تم سے مجھ کو شکوہ کیوں ہو آخر باسی پھولوں کو

    کون گلے کا ہار بنائے کون ایسا دیوانہ ہے

    ایک نظر میں دنیا بھر سے ایک نظر میں کچھ بھی نہیں

    چاہت میں انداز نظر ہی چاہت کا پیمانہ ہے

    خود تم نے آغاز کیا تھا جس کا ایک تبسم سے

    محرومی کے آنسو بن کر ختم پہ وہ افسانہ ہے

    یوں ہے اس کی بزم طرب میں اک دل غم دیدہ جیسے

    چاروں جانب رنگ محل ہیں بیچ میں اک ویرانہ ہے

    مأخذ:

    Rooh-e-Ghazal,Pachas Sala Intekhab (Pg. 115)

      • اشاعت: 1993
      • ناشر: انجمن روح ادب، الہ آباد
      • سن اشاعت: 1993

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے