حق نوا جرأت اظہار تک آ پہنچے ہیں

شوق اثر رامپوری

حق نوا جرأت اظہار تک آ پہنچے ہیں

شوق اثر رامپوری

MORE BYشوق اثر رامپوری

    حق نوا جرأت اظہار تک آ پہنچے ہیں

    حوصلے اب رسن و دار تک آ پہنچے ہیں

    شیخ صاحب بھی ہیں ساقی ترے میخانے میں

    تیری جنت میں گنہ گار تک آ پہنچے ہیں

    درد دل کا مرے افسانہ ہیں وہ دو آنسو

    جو ترے پھول سے رخسار تک آ پہنچے ہیں

    ان بیانوں سے مرا کوئی تعلق ہی نہیں

    جو مرے نام سے اخبار تک آ پہنچے ہیں

    امن عالم کی دعا کے لئے جو اٹھتے تھے

    آج وہ ہاتھ بھی تلوار تک آ پہنچے ہیں

    حل نکل آیا ہے گمراہئ دل کا جب سے

    غم زمانے کے غم یار تک آ پہنچے ہیں

    دیکھیے ان کو چمن میں نظر آئے کیا کیا

    شوقؔ جو نرگس بیمار تک آ پہنچے ہیں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY