ہر اہتمام ہے دو دن کی زندگی کے لیے

ابو المجاہد زاہد

ہر اہتمام ہے دو دن کی زندگی کے لیے

ابو المجاہد زاہد

MORE BYابو المجاہد زاہد

    ہر اہتمام ہے دو دن کی زندگی کے لیے

    سکون قلب نہیں پھر بھی آدمی کے لیے

    تمام عمر خوشی کی تلاش میں گزری

    تمام عمر ترستے رہے خوشی کے لیے

    نہ کھا فریب وفا کا یہ بے وفا دنیا

    کبھی کسی کے لیے ہے کبھی کسی کے لیے

    یہ دور شمس و قمر یہ فروغ علم و ہنر

    زمین پھر بھی ترستی ہے روشنی کے لیے

    کبھی اٹھے تھے جو خورشید زندگی بن کر

    ترس رہے ہیں وہ تاروں کی روشنی کے لیے

    ستم طرازی دور خرد خدا کی پناہ

    کہ آدمی ہی مصیبت ہے آدمی کے لیے

    رہ حیات کی تاریکیوں میں اے زاہدؔ

    چراغ دل ہے مرے پاس روشنی کے لیے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY