ہر ایک زخم کی شدت کو کم کیا جاتا

نبیل احمد نبیل

ہر ایک زخم کی شدت کو کم کیا جاتا

نبیل احمد نبیل

MORE BYنبیل احمد نبیل

    ہر ایک زخم کی شدت کو کم کیا جاتا

    نمک سے کام نہ مرہم کا گر لیا جاتا

    دلوں کا بوجھ دلوں سے اتارنے کے لیے

    یہ لازمی تھا گریبان کو سیا جاتا

    زمانہ پاؤں کی ٹھوکر میں آ بھی سکتا تھا

    سروں کو اپنے اٹھا کر اگر جیا جاتا

    کمی نہ آتی ترے احترام میں شاہا

    کسی غریب کا حق جو اسے دیا جاتا

    ہماری موت بھی ہوتی بقا ہماری نبیلؔ

    کہ پیالہ زہر کا ہاتھوں سے گر پیا جاتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY