ہر اک درد و غم کی دوا ہو گئے

کنول ایم۔اے

ہر اک درد و غم کی دوا ہو گئے

کنول ایم۔اے

MORE BYکنول ایم۔اے

    ہر اک درد و غم کی دوا ہو گئے

    مرے دل کا وہ مدعا ہو گئے

    جو لب پر تھے نالے رسا ہو گئے

    مرے حق میں پیہم دعا ہو گئے

    ادھر جذب دل کامراں ہو گیا

    ادھر ان کے وعدے وفا ہو گئے

    تری یاد میں گم ہوئے اس قدر

    ہر اک قید غم سے رہا ہو گئے

    کسی غم کو بھی جو نہ خاطر میں لائے

    ترے غم میں وہ مبتلا ہو گئے

    مرے غم کا افسانہ سن سن کے وہ

    غنیمت ہے درد آشنا ہو گئے

    وہی زخم جو دل پہ تھے اے کنولؔ

    گلوں کی طرح خوش نما ہو گئے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY