ہر مسلک ہر مکتب عشق نہیں ہوتا

معین شاداب

ہر مسلک ہر مکتب عشق نہیں ہوتا

معین شاداب

MORE BY معین شاداب

    ہر مسلک ہر مکتب عشق نہیں ہوتا

    سب لوگوں کا مذہب عشق نہیں ہوتا

    جسم جہاں ہو وہ سب عشق نہیں ہوتا

    ہم سے ایسا بے ڈھب عشق نہیں ہوتا

    ان کو میرے بھیگے تکیے دکھلا دو

    جو یہ کہتے ہیں اب عشق نہیں ہوتا

    ہمدردی کو ہمدردی سمجھا جائے

    ہر جذبے کا مطلب عشق نہیں ہوتا

    سردی اور گرمی کے عذر نہیں چلتے

    موسم دیکھ کے صاحب عشق نہیں ہوتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY