ہر قدم مرحلۂ دار و صلیب آج بھی ہے

ساحر لدھیانوی

ہر قدم مرحلۂ دار و صلیب آج بھی ہے

ساحر لدھیانوی

MORE BYساحر لدھیانوی

    ہر قدم مرحلۂ دار و صلیب آج بھی ہے

    جو کبھی تھا وہی انساں کا نصیب آج بھی ہے

    جگمگاتے ہیں افق پر یہ ستارے لیکن

    راستہ منزل ہستی کا مہیب آج بھی ہے

    سر مقتل جنہیں جانا تھا وہ جا بھی پہنچے

    سر منبر کوئی محتاط خطیب آج بھی ہے

    اہل دانش نے جسے امر مسلم مانا

    اہل دل کے لیے وہ بات عجیب آج بھی ہے

    یہ تری یاد ہے یا میری اذیت کوشی

    ایک نشتر سا رگ جاں کے قریب آج بھی ہے

    کون جانے یہ ترا شاعر آشفتہ مزاج

    کتنے مغرور خداؤں کا رقیب آج بھی ہے

    مآخذ
    • کتاب : Kulliyat-e-Sahir (Pg. 144)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY