ہر قدم پاؤں میں ہیں انگارے

نبیل احمد نبیل

ہر قدم پاؤں میں ہیں انگارے

نبیل احمد نبیل

MORE BYنبیل احمد نبیل

    ہر قدم پاؤں میں ہیں انگارے

    تیری رائے ہے کیا خدا بارے

    دونوں کس بے بسی میں ملتے ہیں

    آہوئے جاں غزال تاتارے

    پاؤں ٹکتا نہیں زمیں پہ کہیں

    سر پہ کیا گھومتے ہیں سیارے

    آنکھ کی راہ سے نکل آئے

    چاند راتوں کے سرد مہ پارے

    یہ نہ سمجھو گنہ گار نہیں

    کوئی پتھر اگر اٹھا مارے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY