ہر سانس ہے اک نغمہ ہر نغمہ ہے مستانہ

آرزو لکھنوی

ہر سانس ہے اک نغمہ ہر نغمہ ہے مستانہ

آرزو لکھنوی

MORE BYآرزو لکھنوی

    ہر سانس ہے اک نغمہ ہر نغمہ ہے مستانہ

    کس درجہ دکھے دل کا رنگین ہے افسانہ

    جو کچھ تھا نہ کہنے کا سب کہہ گیا دیوانہ

    سمجھو تو مکمل ہے اب عشق کا افسانہ

    دو زندگیوں کا ہے چھوٹا سا یہ افسانہ

    لہرایا جہاں شعلہ اندھا ہوا پروانہ

    ان رس بھری آنکھوں سے مستی جو ٹپکتی ہے

    ہوتی ہے نظر ساقی دل بنتا ہے پیمانہ

    ویرانے میں دیوانہ گھر چھوڑ کے آیا تھا

    جب ہوگا نہ دیوانہ گھر ڈھونڈھے گا ویرانہ

    افسانہ غم دل کا سننے کے نہیں قابل

    کہہ دیتے ہیں سب ہنس کر دیوانہ ہے دیوانہ

    جب عشق کے ماروں کا پرساں ہی نہیں کوئی

    پھر دونوں برابر ہیں بستی ہو کہ ویرانہ

    یہ آگ محبت کی پانی سے نہیں بجھتی

    پھر شمع سے جا لپٹا جلتا ہوا پروانہ

    مآخذ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY