ہر سنگ میں شرار ہے تیرے ظہور کا

محمد رفیع سودا

ہر سنگ میں شرار ہے تیرے ظہور کا

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    ہر سنگ میں شرار ہے تیرے ظہور کا

    موسیٰ نہیں کہ سیر کروں کوہ طور کا

    پڑھیے درود حسن صبیح و ملیح پر

    جلوہ ہر ایک پر ہے محمد کے نور کا

    توڑوں یہ آئنہ کہ ہم آغوش عکس ہے

    ہووے نہ مج کو پاس جو تیرے حضور کا

    بیکس کوئی مرے تو جلے اس پہ دل مرا

    گویا ہے یہ چراغ غریباں کی گور کا

    ہم تو قفس میں آن کے خاموش ہو رہے

    اے ہم صفیر فائدہ ناحق کے شور کا

    ساقی سے کہہ کہ ہے شب مہتاب جلوہ گر

    دے بسمہ پوش ہو کے تو ساغر بلور کا

    سوداؔ کبھی نہ مانیو واعظ کی گفتگو

    آوازۂ دہل ہے خوش آیند دور کا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    ہر سنگ میں شرار ہے تیرے ظہور کا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY