ہر شخص میں کچھ لوگ کمی ڈھونڈ رہے ہیں

ڈاکٹر اعظم

ہر شخص میں کچھ لوگ کمی ڈھونڈ رہے ہیں

ڈاکٹر اعظم

MORE BYڈاکٹر اعظم

    ہر شخص میں کچھ لوگ کمی ڈھونڈ رہے ہیں

    نادان ہیں مثبت میں نفی ڈھونڈ رہے ہیں

    گل ڈھونڈ رہے ہیں نہ کلی ڈھونڈ رہے ہیں

    گلشن میں بس اک شاخ ہری ڈھونڈ رہے ہیں

    اس یگ میں کہاں ہم بھی ولی ڈھونڈ رہے ہیں

    انساں میں صفات بشری ڈھونڈ رہے ہیں

    بادل کی سیاہی میں کرن جیسی چمکتی

    ہر غم میں چھپی ہم بھی خوشی ڈھونڈ رہے ہیں

    اک شعر جو موزوں نہیں کر پائے ہیں اب تک

    غالبؔ کی غزل میں بھی کمی ڈھونڈ رہے ہیں

    مدت سے تقاضہ ہے کہ لوٹا دو مرا دل

    مدت سے بہانا ہے ابھی ڈھونڈ رہے ہیں

    تہذیب و تمدن کو خلوص اور وفا کو

    اعظمؔ ہی نہیں آج سبھی ڈھونڈ رہے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY