ہر عضو مسافر ہے نہیں کچھ سفری آنکھ

خواجہ محمد وزیر

ہر عضو مسافر ہے نہیں کچھ سفری آنکھ

خواجہ محمد وزیر

MORE BYخواجہ محمد وزیر

    ہر عضو مسافر ہے نہیں کچھ سفری آنکھ

    ہے آخر شب عمر چراغ سحری آنکھ

    کیا کرتی ہے دل کش سخن اے رشک پری آنکھ

    لو سیکھ گئی طرز کلام بشری آنکھ

    ان آنکھوں میں صانع نے بھرے کوٹ کے موتی

    قسمت یہ ہماری ہے کہ اشکوں سے بھری آنکھ

    باتیں جو کرو ناز سے تم منہ کو چھپا کر

    سننے کے لئے کان ہو اے رشک پری آنکھ

    آیا ہے مرے دل کا غبار آنسوؤں کے ساتھ

    لو اب تو ہوئی مالک خشکی و تری آنکھ

    اب تک وہی رونا ہے وہی حسرت دیدار

    ہم مر گئے اس پر بھی یہ کافر نہ مری آنکھ

    تیار کیا خامۂ مو اپنے مژہ سے

    کھینچیں گے مگر نقشۂ نازک کمری آنکھ

    نرگس پہ نظر کیجے دوبارہ کہ وہ کٹ جائے

    ہو جائے نظر ثانی میں اس کی نظری آنکھ

    صحبت کا اثر صاحب بینش کو ہو کیونکر

    عینک ہو اگر سبز نہ ہو جائے ہری آنکھ

    باتوں کو زباں مثل سخن منہ سے نکل جائے

    نظارے کو ہو پائے نگہ سے سفری آنکھ

    تیر‌ مژہ یار کو مژگاں ہی سمجھتے

    کس آنکھ سے لڑتے ہی سدا بل بے جری آنکھ

    رفتار تو دکھلا کے زخود رفتہ بنا دو

    نرگس کی طرح ہے ہمہ تن کبک دری آنکھ

    دامن کی طرح چاک ہوے آنکھ کے پردے

    او دست جنوں سے کہ گئی جامہ دری آنکھ

    جو اہل نظر میں کبھی خود بیں نہیں ہوتی

    دیکھو کہ ہے اس عیب‌ نمایاں سے بری آنکھ

    کیا قہر سوا آیت‌ ابرو ہوئی نازل

    ڈر ہے نہ کرے دعویٔ پیغامبری آنکھ

    کشتی وہ لیے نوح کی مانند چلے آئیں

    طوفان بپا کر شب فرقت میں اری آنکھ

    رہتے ہیں وزیرؔ اشک کی جا ٹکڑے جگر کے

    ان روزوں ہوئی کان عقیق جگری آنکھ

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY