حوصلہ امتحان سے نکلا

مضطر خیرآبادی

حوصلہ امتحان سے نکلا

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    حوصلہ امتحان سے نکلا

    جان کا کام جان سے نکلا

    درد دل ان کے کان تک پہنچا

    بات بن کر زبان سے نکلا

    بے وفائی میں وہ زمیں والا

    ہاتھ بھر آسمان سے نکلا

    حرف مطلب فقط کہا نہ گیا

    ورنہ سب کچھ زبان سے نکلا

    کچھ کی کچھ کون سننے والا تھا

    کچھ کا کچھ کیوں زبان سے نکلا

    اک ستم مٹ گیا تو اور ہوا

    آسماں آسمان سے نکلا

    جس سے بچتا تھا میں دم اظہار

    وہی پہلو بیان سے نکلا

    وہ بھی ارمان کیا جو اے مضطرؔ

    دل میں رہ کر زبان سے نکلا

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman (Part-1) (Pg. 199)
    • Author : Muztar Khairabadi
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY