ہوا آئی نہ ایندھن آ رہا ہے

عاطف کمال رانا

ہوا آئی نہ ایندھن آ رہا ہے

عاطف کمال رانا

MORE BYعاطف کمال رانا

    ہوا آئی نہ ایندھن آ رہا ہے

    چراغوں میں نیا پن آ رہا ہے

    جمال یار تیرے جھانکنے سے

    کنویں سے پانی روشن آ رہا ہے

    میں گلیوں میں نکلنا چاہتا ہوں

    مرے رستے میں آنگن آ رہا ہے

    مجھے شہتوت کی خواہش بہت تھی

    مگر مجھ پر تو جامن آ رہا ہے

    میاں میں اپنی جانب آ رہا ہوں

    خبر کر دو کہ دشمن آ رہا ہے

    مجھے خیرات بانٹی جا رہی ہے

    مرے ہاتھوں میں برتن آ رہا ہے

    گلے میں ہار آنا چاہیے تھا

    گلے میں طوق گردن آ رہا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY