ہواۓ سبز کا جھونکا کوئی غنچہ کھلاتا ہے

شاہدہ مجید

ہواۓ سبز کا جھونکا کوئی غنچہ کھلاتا ہے

شاہدہ مجید

MORE BY شاہدہ مجید

    ہواۓ سبز کا جھونکا کوئی غنچہ کھلاتا ہے

    خزاؤں کا طلسم زرد آخر ٹوٹ جاتا ہے

    گلوں کے مخملیں آنچل نمی سے بھیگ جاتے ہیں

    کسی کی یاد میں شب بھر فلک آنسو بہاتا ہے

    کسی بے مہر ساعت میں تمہارا مسکرا دینا

    شب تاریک میں جیسے ستارا ٹمٹماتا ہے

    تعاقب تتلیوں کا پر اٹھا لانا پرندوں کے

    کسی جگنو کو آنچل میں چھپانا یاد آتا ہے

    دھواں اٹھتا ہے یادوں کا سلگتے دل کے پہلو سے

    کسی کی سرمگیں آنکھوں کا کاجل پھیل جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY