ہوس و وفا کی سیاستوں میں بھی کامیاب نہیں رہا

سحر انصاری

ہوس و وفا کی سیاستوں میں بھی کامیاب نہیں رہا

سحر انصاری

MORE BYسحر انصاری

    ہوس و وفا کی سیاستوں میں بھی کامیاب نہیں رہا

    کوئی چہرہ ایسا بھی چاہیئے جو پس نقاب نہیں رہا

    تری آرزو سے بھی کیوں نہیں غم زندگی میں کوئی کمی

    یہ سوال وہ ہے کہ جس کا اب کوئی اک جواب نہیں رہا

    تھیں سماعتیں سر ہاؤ ہو چھڑی قصہ خانوں کی گفتگو

    وہی جس نے بزم سجائی تھی وہی باریاب نہیں رہا

    کم و بیش ایک سے پیرہن کم و بیش ایک سا ہے چلن

    سر رہ گزر کسی وصف کا کوئی انتخاب نہیں رہا

    وہ کتاب دل جسے ربط تھا ترے کیف ہجر و وصال سے

    وہ کتاب دل تو لکھی گئی مگر انتساب نہیں رہا

    میں ہر ایک شب یہی بند آنکھوں سے پوچھتا ہوں سحر تلک

    کہ یہ نیند کس لیے اڑ گئی اگر ایک خواب نہیں رہا

    یہاں راستے بھی ہیں بے شجر ہے منافقت بھی یہاں ہنر

    مجھے اپنے آپ پہ فخر ہے کہ میں کامیاب نہیں رہا

    فقط ایک لمحے میں منکشف ہوئی شمع موسم آرزو

    سحرؔ اس کے چہرے کی سمت جب گل آفتاب نہیں رہا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سحر انصاری

    سحر انصاری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY