حیات انساں کی سر تا پا زباں معلوم ہوتی ہے

اختر انصاری

حیات انساں کی سر تا پا زباں معلوم ہوتی ہے

اختر انصاری

MORE BY اختر انصاری

    حیات انساں کی سر تا پا زباں معلوم ہوتی ہے

    یہ دنیا انقلاب آسماں معلوم ہوتی ہے

    مکدر ہے خزاں کے خون سے عیش بہار گل

    خزاں کی رت بہار بے خزاں معلوم ہوتی ہے

    مجھے ناکامی پیہم سے مایوسی نہیں ہوتی

    ابھی امید میری نوجواں معلوم ہوتی ہے

    کوئی جب نالہ کرتا ہے کلیجہ تھام لیتا ہوں

    فغان غیر بھی اپنی فغاں معلوم ہوتی ہے

    مآل درد و غم دیکھو صدائے ساز عشرت بھی

    اتر جاتی ہے جب دل میں فغاں معلوم ہوتی ہے

    چمن میں عندلیب زار کی فریاد اے اخترؔ

    دل ناداں کو اپنی داستاں معلوم ہوتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY