ہجر کرتے یا کوئی وصل گزارا کرتے

عبید اللہ علیم

ہجر کرتے یا کوئی وصل گزارا کرتے

عبید اللہ علیم

MORE BY عبید اللہ علیم

    ہجر کرتے یا کوئی وصل گزارا کرتے

    ہم بہرحال بسر خواب تمہارا کرتے

    ایک ایسی بھی گھڑی عشق میں آئی تھی کہ ہم

    خاک کو ہاتھ لگاتے تو ستارا کرتے

    اب تو مل جاؤ ہمیں تم کہ تمہاری خاطر

    اتنی دور آ گئے دنیا سے کنارا کرتے

    محو آرائش رخ ہے وہ قیامت سر بام

    آنکھ اگر آئینہ ہوتی تو نظارا کرتے

    ایک چہرے میں تو ممکن نہیں اتنے چہرے

    کس سے کرتے جو کوئی عشق دوبارا کرتے

    جب ہے یہ خانۂ دل آپ کی خلوت کے لیے

    پھر کوئی آئے یہاں کیسے گوارا کرتے

    کون رکھتا ہے اندھیرے میں دیا آنکھ میں خواب

    تیری جانب ہی ترے لوگ اشارا کرتے

    ظرف آئینہ کہاں اور ترا حسن کہاں

    ہم ترے چہرے سے آئینہ سنوارا کرتے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عبید اللہ علیم

    عبید اللہ علیم

    مآخذ:

    • کتاب : Veeran sarai ka diya (Pg. 135)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY