ہجر کے دن کی رات ہوئی برسات ہوئی

منظر نقوی

ہجر کے دن کی رات ہوئی برسات ہوئی

منظر نقوی

MORE BYمنظر نقوی

    ہجر کے دن کی رات ہوئی برسات ہوئی

    آنکھ سے دل کی بات ہوئی برسات ہوئی

    تنہا تھا تو صاف رہا یہ مطلع دل

    یاد تمہاری سات ہوئی برسات ہوئی

    دل کا البم کھول کے گم صم بیٹھا تھا

    تصویروں سے بات ہوئی برسات ہوئی

    دھوپ مسافت کاٹی ہم نے ہنس ہنس کر

    منزل پر جب رات ہوئی برسات ہوئی

    پیار کے کھیل میں منظر یہ بھی دیکھا ہے

    جیت ہوئی یا مات ہوئی برسات ہوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY