ہندو ہیں بت پرست مسلماں خدا پرست

محمد رفیع سودا

ہندو ہیں بت پرست مسلماں خدا پرست

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    ہندو ہیں بت پرست مسلماں خدا پرست

    پوجوں میں اس کسی کو جو ہو آشنا پرست

    اس دور میں گئی ہے مروت کی آنکھ پھوٹ

    معدوم ہے جہان سے چشم حیا پرست

    دیکھا ہے جب سے رنگ کفک تیرے پاؤں میں

    آتش کو چھوڑ گبر ہوئے ہیں حنا پرست

    چاہے کہ عکس دوست رہے تجھ میں جلوہ گر

    آئینہ دار دل کو رکھ اپنے صفا پرست

    آوارگی سے خوش ہوں میں اتنا کہ بعد مرگ

    ہر ذرہ میری خاک کا ہوگا ہوا پرست

    خاک فنا کو تاکہ پرستش تو کر سکے

    جوں خضر مت کہائیو آب بقا پرست

    سوداؔ سے شخص کے تئیں آزردہ کیجیے

    اے خود پرست حیف نہیں تو وفا پرست

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    ہندو ہیں بت پرست مسلماں خدا پرست فصیح اکمل

    مآخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY