ہو کیسے کسی وعدے کا اقرار رجسٹرڈ

شوق بہرائچی

ہو کیسے کسی وعدے کا اقرار رجسٹرڈ

شوق بہرائچی

MORE BYشوق بہرائچی

    ہو کیسے کسی وعدے کا اقرار رجسٹرڈ

    جب خود ہی نہیں ہے مری سرکار رجسٹرڈ

    کیا شیخ و برہمن پہ کرے کوئی بھروسہ

    تسبیح رجسٹرڈ نہ زنار رجسٹرڈ

    اس جنبش چتون سے کوئی بچ نہیں سکتا

    قاتل کا مرے ہوتا ہے ہر وار رجسٹرڈ

    چاہے بھی تو اب ترک تغافل نہیں ممکن

    ہے دوست کی غفلت کا یہ آزار رجسٹرڈ

    مدت ہوئی دم توڑ دیا امن و اماں نے

    اب ہو گئے یہ حشر کے آثار رجسٹرڈ

    ہو پایا ترے حسن تلون کے کرم سے

    اقرار رجسٹرڈ نہ انکار رجسٹرڈ

    دنیا ہے مری تیغ کا مانے ہوئے لوہا

    ہے سارے زمانے میں یہ تلوار رجسٹرڈ

    تجھ پر ترے ہر فعل پر اٹھنے لگی انگلی

    تو خود ہے گزیٹیڈ ترا کردار رجسٹرڈ

    اب حسن فروشی کے لیے مصر کے بدلے

    بھارت میں ہے نخاس کا بازار رجسٹرڈ

    تو لاکھ کرے چہرۂ زیبا کی نمائش

    ہوگا نہ ترے حسن کا معیار رجسٹرڈ

    چڑھتا ہے ارادہ مرا پروان تہ تیغ

    ہوتا ہے مرا عزم سر دار رجسٹرڈ

    بیٹھا ہوا سکہ ہے مری فکر سخن کا

    اے شوقؔ نہ ہوں کیوں مرے اشعار رجسٹرڈ

    مأخذ :
    • کتاب : intekhab-e-kalam shauq bahraichi (Pg. 61)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY