ہوا جب ٹوٹنا ابتر نوا بے سود شیشے کا

ابان آصف کچکر

ہوا جب ٹوٹنا ابتر نوا بے سود شیشے کا

ابان آصف کچکر

MORE BYابان آصف کچکر

    ہوا جب ٹوٹنا ابتر نوا بے سود شیشے کا

    اٹھا شہر قضا میں مدعا نا بود شیشے کا

    کہ بس بادہ کشی مطلب تواں ہر جا ہے شیشے کی

    تھا کب مرغوب تھا ادراک یاں مردود شیشے کا

    نفس مرگ نفس ہوتا ہے جوں شیشے کی خلقت میں

    اثر بے لوث ہوتا ہے جدھر محدود شیشے کا

    کسو خالق کا دعویٰ کر گیا پھر مر گیا انساں

    خدائی کر نہیں سکتا کبھی نمرود شیشے کا

    عبارت منتقل رہتی ہے پھر پروردگاراں سے

    کہیں بت ہے تو پتھر کا کہیں معبود شیشے کا

    ابانؔ کو تم کہو انساں کہو انساں کو تم شیشہ

    کہو موجود انساں تو کہو موجود شیشے کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY