ہوا ظاہر خط روئے نگار آہستہ آہستہ

ولی محمد ولی

ہوا ظاہر خط روئے نگار آہستہ آہستہ

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    ہوا ظاہر خط روئے نگار آہستہ آہستہ

    کہ جیوں گلشن میں آتی ہے بہار آہستہ آہستہ

    کیا ہوں رفتہ رفتہ رام اس کی چشم وحشی کوں

    کہ جیوں آہو کوں کرتے ہیں شکار آہستہ آہستہ

    جو اپنے تن کوں مثل جوئبار اول کیا پانی

    ہوا اس سرو قد سوں ہم کنار آہستہ آہستہ

    برنگ قطرۂ سیماب میرے دل کی جنبش سوں

    ہوا ہے دل صنم کا بے قرار آہستہ آہستہ

    اسے کہنا بجا ہے عشق کے گل زار کا بلبل

    جو گل رویاں میں پایا اعتبار آہستہ آہستہ

    مرا دل اشک ہو پہنچا ہے کوچے میں سریجن کے

    گیا کعبے میں یہ کشتی سوار آہستہ آہستہ

    ولیؔ مت حاسداں کی بات سوں دل کوں مکدر کر

    کہ آخر دل سوں جاوے گا غبار آہستہ آہستہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY