ہوئے ہیں بند دشاؤں کے سارے رستے آ

کمار پاشی

ہوئے ہیں بند دشاؤں کے سارے رستے آ

کمار پاشی

MORE BYکمار پاشی

    ہوئے ہیں بند دشاؤں کے سارے رستے آ

    اندھیرا چھانے لگا لوٹ کر پرندے آ

    میں تیری ساری تمازت کو جذب کر لوں گا

    تو آفتاب کبھی میرے دل میں بجھنے آ

    کبھی دکھا دے وہ منظر جو میں نے دیکھے نہیں

    کبھی تو نیند میں اے خواب کے فرشتے آ

    یہاں تو کب سے اندھیروں میں غرق ہے دنیا

    ادھر جو آ تو ستاروں کی شال اوڑھے آ

    نہ چپکے چپکے سلگ جی کو اپنے ہلکا کر

    تجھے یہ کون سا دکھ ہے کبھی بتانے آ

    بڑا سکون ملے گا تجھے یہاں آ کر

    جو ہو سکے تو کبھی میرے دل میں رہنے آ

    دہکتا شعلہ سا میں ایک دشت ہوں پاشیؔ

    اگر گھٹا ہے تو ساون کی تو برسنے آ

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ہوئے ہیں بند دشاؤں کے سارے رستے آ نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY