ہوئی ہے شام تو آنکھوں میں بس گیا پھر تو

احمد فراز

ہوئی ہے شام تو آنکھوں میں بس گیا پھر تو

احمد فراز

MORE BYاحمد فراز

    ہوئی ہے شام تو آنکھوں میں بس گیا پھر تو

    کہاں گیا ہے مرے شہر کے مسافر تو

    مری مثال کہ اک نخل خشک صحرا ہوں

    ترا خیال کہ شاخ چمن کا طائر تو

    میں جانتا ہوں کہ دنیا تجھے بدل دے گی

    میں مانتا ہوں کہ ایسا نہیں بظاہر تو

    ہنسی خوشی سے بچھڑ جا اگر بچھڑنا ہے

    یہ ہر مقام پہ کیا سوچتا ہے آخر تو

    فضا اداس ہے رت مضمحل ہے میں چپ ہوں

    جو ہو سکے تو چلا آ کسی کی خاطر تو

    فرازؔ تو نے اسے مشکلوں میں ڈال دیا

    زمانہ صاحب زر اور صرف شاعر تو

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    غلام علی

    غلام علی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    ہوئی ہے شام تو آنکھوں میں بس گیا پھر تو نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے