ہوئی ہم سے یہ نادانی تری محفل میں آ بیٹھے

شکیل بدایونی

ہوئی ہم سے یہ نادانی تری محفل میں آ بیٹھے

شکیل بدایونی

MORE BYشکیل بدایونی

    ہوئی ہم سے یہ نادانی تری محفل میں آ بیٹھے

    زمیں کی خاک ہو کر آسمان سے دل لگا بیٹھے

    ہوا خون تمنا اس کا شکوہ کیا کریں تم سے

    نہ کچھ سوچا نہ کچھ سمجھا جگر پر تیر کھا بیٹھے

    خبر کی تھی گلستان محبت میں بھی خطرے ہیں

    جہاں گرتی ہے بجلی ہم اسی ڈالی پہ جا بیٹھے

    نہ کیوں انجام الفت دیکھ کر آنسو نکل آئیں

    جہاں کو لوٹنے والے خود اپنا گھر لٹا بیٹھے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Shakiil Badaayuuni (Pg. 792)
    • Author : Shakiil Badaayuuni
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY