ہوئی تاثیر آہ و زاری کی

مومن خاں مومن

ہوئی تاثیر آہ و زاری کی

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    ہوئی تاثیر آہ و زاری کی

    رہ گئی بات بے قراری کی

    شکوۂ دشمنی کریں کس سے

    واں شکایت ہے دوست داری کی

    مبتلائے شب فراق ہوئے

    ضد سے ہم تیرہ روزگاری کی

    یاد آئی جو گرمجوشیٔ یار

    دیدۂ تر نے شعلہ باری کی

    کیوں نہ ڈر جاؤں دیکھ کر وہ زلف

    ہے شب ہجر کی سی تاریکی

    یاس دیکھو کہ غیر سے کہہ دی

    بات اپنی امیدواری کی

    بس کہ ہے یار کی کمر کا خیال

    شعر کی سوجھتی ہے باریکی

    کر دے روز جزا شب دیجور

    ظلمت اپنی سیاہ کاری کی

    تیرے ابرو کی یاد میں ہم نے

    ناخن غم سے دل فگاری کی

    قتل دشمن کا ہے ارادہ اسے

    یہ سزا اپنی جاں نثاری کی

    کیا مسلماں ہوئے کہ اے مومنؔ

    حاصل اس بت سے شرمساری کی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY