ہجوم غم میں کس زندہ دلی سے

مظفر رزمی

ہجوم غم میں کس زندہ دلی سے

مظفر رزمی

MORE BYمظفر رزمی

    ہجوم غم میں کس زندہ دلی سے

    مسلسل کھیلتا ہوں زندگی سے

    قریب آتے ہیں لیکن بے رخی سے

    پرانے دوست بھی ہیں اجنبی سے

    فرشتے دم بخود ابلیس حیراں

    توقع یہ کہاں تھی آدمی سے

    نظام عصر نو یہ کہہ رہا ہے

    اندھیرے پھیلتے ہیں روشنی سے

    چلے آئے حرم سے مے کدے میں

    پریشاں ہو گئے جب زندگی سے

    لگی ہے آگ جب سے گلستاں میں

    بہت ڈرنے لگا ہوں روشنی سے

    نہ ہو جو ترجمان وقت رزمیؔ

    بھلا کیا فائدہ اس شاعری سے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ہجوم غم میں کس زندہ دلی سے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY