ہشیار ہیں تو ہم کو بہک جانا چاہئے

عرفان صدیقی

ہشیار ہیں تو ہم کو بہک جانا چاہئے

عرفان صدیقی

MORE BY عرفان صدیقی

    ہشیار ہیں تو ہم کو بہک جانا چاہئے

    بے سمت راستہ ہے بھٹک جانا چاہئے

    دیکھو کہیں پیالے میں کوئی کمی نہ ہو

    لبریز ہو چکا تو چھلک جانا چاہئے

    حرف رجز سے یوں نہیں ہوتا کوئی کمال

    باطن تک اس صدا کی دھمک جانا چاہئے

    گرتا نہیں مصاف میں بسمل کسی طرح

    اب دست نیزہ کار کو تھک جانا چاہئے

    طے ہو چکے سب آبلہ پائی کے مرحلے

    اب یہ زمیں گلابوں سے ڈھک جانا چاہئے

    شاید پس غبار تماشا دکھائی دے

    اس رہگزر پہ دور تلک جانا چاہئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY