حسن شوخ چشم میں نام کو وفا نہیں

تاجور نجیب آبادی

حسن شوخ چشم میں نام کو وفا نہیں

تاجور نجیب آبادی

MORE BYتاجور نجیب آبادی

    حسن شوخ چشم میں نام کو وفا نہیں

    درد آفریں نظر درد آشنا نہیں

    ننگ عاشقی ہے وہ ننگ زندگی ہے وہ

    جس کے دل کا آئینہ تیرا آئینہ نہیں

    آہ اس کی بے کسی تو نہ جس کے ساتھ ہو

    ہائے اس کی بندگی جس کا تو خدا نہیں

    حیف وہ الم نصیب جس کا درد تو نہ ہو

    اف وہ درد زندگی جس کی تو دوا نہیں

    دوست یا عزیز ہیں خود فریبیوں کا نام

    آج آپ کے سوا کوئی آپ کا نہیں

    اپنے حسن کو ذرا تو مری نظر سے دیکھ

    دوست! شش جہات میں کچھ ترے سوا نہیں

    بے وفا خدا سے ڈر طعنۂ وفا نہ دے

    تاجورؔ میں اور عیب کچھ ہوں بے وفا نہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 49)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY