حسن ہے محبت ہے موسم بہاراں ہے

ضیا فتح آبادی

حسن ہے محبت ہے موسم بہاراں ہے

ضیا فتح آبادی

MORE BYضیا فتح آبادی

    دلچسپ معلومات

    دلّی1950

    حسن ہے محبت ہے موسم بہاراں ہے

    کائنات رقصاں ہے زندگی غزل خواں ہے

    عشرتوں کے متلاشی غم سے کیوں گریزاں ہے

    تیرگی کے پردے میں روشنی کا ساماں ہے

    گیت ہیں جوانی ہے ابر ہے بہاریں ہیں

    مضطرب ادھر میں ہوں تو ادھر پریشاں ہے

    دھوپ ہو کہ بارش ہو تو ہے مونس و ہمدم

    مجھ پہ یہ ترا احساں اے غم فراواں ہے

    رند بخل ساقی پر کس قدر تھے کل برہم

    مے کدہ ہے آج اپنا اور تنگ داماں ہے

    اف دو رنگیٔ دنیا اف تضاد کا عالم

    کفر کے اجالے ہیں تیرگیٔ ایماں ہے

    بے نقاب دیکھا تھا خواب میں انہیں اک شب

    آج تک نگاہوں میں اے ضیاؔ چراغاں ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY