حسن خوشبو پیام کچھ بھی نہ تھی

اسرار اکبر آبادی

حسن خوشبو پیام کچھ بھی نہ تھی

اسرار اکبر آبادی

MORE BYاسرار اکبر آبادی

    حسن خوشبو پیام کچھ بھی نہ تھی

    زندگی میرے نام کچھ بھی نہ تھی

    رنگ بخشے ہیں تیری قربت نے

    ورنہ شہروں کی شام کچھ بھی نہ تھی

    ان کی مخصوص اک ادا کے سوا

    وجہ ترک سلام کچھ بھی نہ تھی

    ذکر ہی سے ترے اجالا تھا

    شمع بزم کلام کچھ بھی نہ تھی

    آدمی کو نشہ تھا روحانی

    پہلے توقیر جام کچھ بھی نہ تھی

    جیسے صحرا کی ہو صدا کوئی

    قدر عرض عوام کچھ بھی نہ تھی

    دل کشا درد کے سوا اسرارؔ

    وہ جدائی کی شام کچھ بھی نہ تھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے